باب 3 ~ زندگی کا تخلیق کار

مجھے خوشی ہے کہ آپ نے اس جدوجہد میں میرے ساتھ شامل ہونے کا فیصلہ کیا۔ ہم مل کر زندگی کے اہم ترین سوالات کے جوابات تلاش کرنے کی کوشش کریں گے۔ ہم ان سوالات کے بارے میں سوچیں گے جن کے بارے میں آپ نے کبھی سوچا بھی نہیں ہوگا۔

اگر کوئی زندگی کا خالق ہے، تو سب کیوں نہیں جانتے کہ وہ کون ہے؟ کیا آپ کو یہ بہت آسان نہیں لگے گا اگر ہم اپنے خالق کو دیکھ سکیں؟ ہمارے بہت سے سوالوں کے آسان جواب ہوں گے۔ لیکن خالق کے پاس ایک معقول وجہ ہونی چاہیے کہ وہ خود کو عوامی طور پر کیوں نہیں دکھاتا۔

پھر بھی فطرت اور انسانوں کو دیکھ کر خالق کی متعدد خصوصیات کو دریافت کرنا ممکن ہے۔ ایک ڈیزائن ڈیزائنر کے بارے میں بھی کچھ ظاہر کرتا ہے۔ اگر آپ فطرت اور کائنات کو دیکھیں تو آپ ڈیزائنر کے بارے میں کیا دریافت کر سکتے ہیں؟ اس باب میں میں آپ کو ڈیزائنر کی کئی خصوصیات دکھانا چاہوں گا، جو فطرت میں دیکھی جا سکتی ہیں۔

ایک تخلیقی ڈیزائنر

زمین پر زندگی ثابت کرتی ہے کہ ڈیزائنر بہت تخلیقی ہے۔ صرف فطرت میں تمام تفصیلات دیکھیں۔ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ ہر چیز تفصیل کے ساتھ اور بہت زیادہ توجہ کے ساتھ بنائی گئی ہے۔ ہر پودا، حیوان اور انسان اتنا پیچیدہ ہے کہ صدیوں کی تحقیق کے بعد بھی سائنسدانوں کو ابھی بہت کچھ دریافت کرنا ہے۔ اور باقی کائنات کا کیا ہوگا؟ بے شمار ستارے اور سیارے ہیں، دریافت کرنے کے لیے بہت ساری چیزیں ہیں۔

blank

کیا آپ کو یاد ہے کہ جب میں نے آپ کے لیے یہ کہانی لکھنا شروع کی تو میں باغ میں تھا، اور میں فطرت کی خوبصورتی اور تفصیل کی مقدار دیکھ کر حیران رہ گیا تھا۔ کوئی دو مخلوق ایک جیسی نہیں ہے اور قدرت کا ہر حصہ آنکھوں کے لیے خوبصورت ہے۔ لیکن فطرت صرف خوبصورت نہیں ہے، انسانوں، جانوروں اور پودوں کی ہر خصوصیت کا بھی کوئی نہ کوئی کام ہوتا ہے۔ سب کچھ مل کر کام کرتا ہے۔

ایک پھول کیڑوں کے بغیر دوبارہ پیدا نہیں ہوسکتا اور کیڑے پھولوں کے بغیر زندہ نہیں رہ سکتے۔ بہت سے پھولوں کے خوبصورت رنگ ہوتے ہیں جن سے وہ کیڑوں کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں۔ بعض پھولوں کی شکل ان کیڑوں کے لیے پرکشش ہوتی ہے جو اپنے پولن کو دوسرے پھول تک لے جا سکتے ہیں۔

شہد کی مکھیاں اور دیگر کیڑے بہت سے پودوں کو پالتے ہیں جنہیں ہم کھاتے ہیں۔ ان شہد کی مکھیوں کے بغیر ہمارے پاس خوراک نہیں ہے۔ اور میرا مطلب صرف شہد نہیں ہے۔ ہم جو پودے کھاتے ہیں ان میں سے زیادہ تر شہد کی مکھیوں کے ذریعے پولینیشن پر منحصر ہوتے ہیں۔ ہماری زندگی ان چھوٹے، پیارے کیڑوں کے بغیر بہت مختلف ہوگی۔

یہ ان ان گنت مثالوں میں سے صرف ایک ہے جو ظاہر کرتی ہے کہ زندگی کو ممکن بنانے کے لیے سب کچھ کیسے مل کر کام کرتا ہے۔ اس کا خالق ان تمام چیزوں کےبنانے کے قابل ہونے کے لیے ناقابل یقین حد تک تخلیقی اور شاندار ہونا چاہیے۔

ایک قابل اعتماد تخلیق کار

ہر رات جب ہم بستر پر جاتے ہیں، تو ہم امید کرتے ہیں کہ چند گھنٹوں میں سورج دوبارہ طلوع ہو جائے گا۔ ہمیں ڈر نہیں ہے کہ یہ اندھیرا ہی رہے گا۔ ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ سال بہ سال موسم آتے اور جاتے رہتے ہیں۔ خزاں میں ہم جانتے ہیں کہ موسم سرما آرہا ہے اور اس کے بعد بہار آئے گی۔ ہر سال بوائی کا موسم ہوتا ہے اور فصل کاٹنے کا موسم۔

ہم دن اور رات اور گرمیوں اور سردیوں کے ان باقاعدہ نمونوں پر بھروسہ کرتے ہیں۔ ہم فطرت کے قوانین جیسے کہ کشش ثقل پر بھی بھروسہ کر سکتے ہیں۔ یہ قوانین غیر تبدیل شدہ ہیں۔ اگر فطرت کے مقررہ قوانین نہ ہوتے تو سائنس کا وجود نہ ہوتا۔

فطرت میں ہر چیز وجہ اور اثر کے مقررہ نمونوں کے مطابق کام کرتی ہے۔ کچھ بھی بے ترتیب نہیں ہوتا۔ ایک دن ہمیشہ 24 گھنٹے طویل ہوتا ہے، کبھی لمبا یا چھوٹا نہیں۔ جب آپ چھلانگ لگاتے ہیں تو کشش ثقل ہمیشہ آپ کو نیچے کھینچتی ہے، کبھی اوپر نہیں۔

اگر فطرت کے قوانین میں من مانی ہو تی تو ہم افراتفری کا شکار ہو جاتے۔ زمین پر زندگی ناممکن ہو جائے گی اور کائنات کا وجود نہ ہو گا۔

خالق ترتیب اور ساخت ، وجہ اور اثر کا خالق ہے۔ لہذا، یہ کہنا محفوظ ہے کہ خالق قابل اعتماد ہے۔

blank

محبت اور رشتوں کا خالق

ہم اپنے آس پاس کے لوگوں کے بغیر نہیں رہ سکتے۔ ہمیں کام کرنے کے قابل ہونے کے لیے ایک دوسرے کی ضرورت ہے۔ ہمیں دوسرے لوگوں کے ساتھ بھی تعلقات کی ضرورت ہے۔ ہمارے خاندان اور پیاروں کے ساتھ رشتہ صرف کھانے پینے کے لیے ایک دوسرے کی ضرورت سے زیادہ گہرا ہے۔ انسانوں کے درمیان تعلقات اور محبت ہمارے وجود کا ایک خاص حصہ ہیں۔ وہ زندگی کو اضافی ذائقہ دیتے ہیں۔ تو خالق کے پاس لوگوں کے درمیان محبت اور تعلقات کے لیے ایک مقصد ہونا چاہیے۔ ہم اس پر مزید کچھ گہرائی میں جائیں گے۔

صحیح اور غلط کی بنیاد

کیا آپ کے خیال میں خالق اب بھی اپنی تخلیق میں شامل ہے؟ یا آپ کو لگتا ہے کہ اس نے کائنات بنائی اور پھر صرف ہمیں چھوڑ دیا؟ اگر آپ اس دنیا کے تمام مصائب کو دیکھیں تو یہ کوئی عجیب سوال نہیں ہے۔

فرض کریں کہ دنیا کسی خالق کے بغیر وجود میں آئی۔ اس صورت میں اس سوال کا کیا جواب ہوگا کہ دنیا میں مصائب کیوں ہیں؟ یا آپ کو لگتا ہے کہ مصیبت بلا وجہ موجود ہے؟ لیکن کچھ صحیح یا غلط کیوں ہے؟ اس کا تعین کون کرتا ہے؟ کہیں نہ کہیں کوئی معیار ہونا چاہیے، ایک عمومی معمول، ایک اخلاقی سچائی۔

ایک شخص کو ‘برائی’ سے کیوں بچانا چاہیے؟ فطرت کے قوانین درست یا غلط کا تعین نہیں کرتے۔ وہ فطرت کے قوانین سے زیادہ کچھ نہیں ہیں۔ وہ وہی کرتے ہیں جو وہ ہمیشہ کرتے ہیں۔ جب آپ چھلانگ لگاتے ہیں تو آپ کو معلوم ہوتا ہے کہ کشش ثقل آپ کو پیچھے کھینچ لے گی۔ اس میں کچھ اچھا یا برا نہیں ہے۔

فرض کریں کہ ہر چیز وجہ اور اثر سے زیادہ نہیں ہے۔ کیا انتخاب کرنا ممکن ہو گا؟ اگر آپ کو لگتا ہے کہ ہم جو کچھ بھی کرتے ہیں وہ صرف جسمانی اور کیمیائی عمل کا نتیجہ ہے، تو دنیا میں ہونے والے مصائب کے بارے میں فکر کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ ہم جو کام کرتے ہیں اس کے لیے ذمہ دار محسوس کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ ہمارے اعمال صرف ہمارے دماغ اور جسم میں کیمیائی عمل کا نتیجہ ہوں گے۔ یا چیزوں کو دیکھنے کا کوئی دوسرا طریقہ ہو سکتا ہے؟

اگر کوئی غیر جانبدارانہ ‘صحیح’ یا ‘غلط’ موجود نہیں ہے تو پھر ہم قتل، عصمت دری، زنا یا جھوٹ کو غلط کیوں کہیں گے؟ ایک قطعی سچائی ہونی چاہیے۔ یہ سچائی تخلیق میں گہری جڑی ہوئی ہے اور خالق کی طرف سے آتی ہے۔

کیا آپ بھی اس سوال کے جواب کے بارے میں متجسس ہیں کہ خالق نے ہمیں کیوں بنایا؟

blank

Alwujud